Khwabon Ki Tabeer Urdu Khwab Nama

Khwabon Ki Tabeer In Urdu Khawab Nama

تخلیق کے آغاز سے ہی ، جہاں بھی انسان آباد ہیں ، دنیا کے ہر حصے ، ہر قوم اور ہر یاد میں بسنے والے انسان ، کسی نہ کسی وقت یا کسی دوسرے مقام پر خواب دیکھ چکے ہیں ، کچھ لوگ کثرت سے اور بعض اوقات جان کو تصاویر کو حرکت پذیر دیکھتے ہیں۔ مختلف اسکرینوں میں اور جس طرح سے ہم اس اسکرین پر مختلف بنتے ہیں اور مختلف کردار اپنے اصلی اور اندر میں ظاہر ہوتے ہیں۔ دماغ پر گزرتا ہوا پردہ ہمیں کبھی خوش ، کبھی دردناک اور خطرناک اور کبھی عجیب و غریب بنا دیتا ہے۔ ناقص مناظر دیکھے جاتے ہیں۔ ذائقہ دار ملک بزرگ اور دوست بھی ملتے ہیں اور باتیں کرتے ہیں ، لہذا نیند کی دنیا میں جو واقعات اور حادثات ہم دیکھتے ہیں وہ خواب کہلاتے ہیں۔

الف

ب

پ

ت

ٹ

ث

ج

چ

ح

خ

د

ڈ

ذ

ر

ڑ

ز

ژ

س

ش

ص

ض

ط

ظ

ع

غ

ف

ق

ک

گ

ل

م

ن

و

ہ

ی

سورہ قرآنی

 

سچے اور جھوٹے خواب کی شناخت 

تعبیر کی اقسام 

خوابوں کے درمیان کی معرفت 

 خوابوں کے حال وقت قسم اور صورت

 خوابوں کے درمیان فرق جاننا

 رویاء صالحہ کی اہمیت

 خوابوں کے مزاج کی شناخت

 اچھے اور برے خواب

 نفس اور روح کا یاد کرنا

 خواب جن کی تعبیر بر عکس ہوتی ہے

 خواب والوں کے ساتھ شرائط و آداب

 بھولے ہوئے خواب کی تعبیر

 سائل اور تعبیر دینے والے کے آداب

 جاہلوں سے خواب بیان کرنے کی ممانعت

 علامتوں کے ساتھ خواب کی درستی

Khwab ki Tabeer(خواب کی تعبیر)


پوری دنیا اور انسانی دنیا میں دھول کے بارے میں دو طرح کے نظریات موجود ہیں۔ ان گروہوں کا کہنا ہے کہ خواب واقعات کی نشاندہی کرتے ہیں اور کچھ کے مطابق یہ ذہنی بیماری کا واحد ثبوت ہے لیکن یہ دونوں نظریات ایک حد تک درست ہیں ، کیوں کہ بعض اوقات ذہنی پریشانی ، ذہنی عارضے ، بے خوابی اور بکھرے ہوئے خیالی تصورات ہی پریشان کن دکھائی دیتے ہیں۔

لیکن یہ حقیقت بھی اپنی جگہ اٹل ہے کہ اکثر خواب سچے بھی ہوتے ہیں جن کے ذریعے انسان کو پیش آمدہ واقعات کی حقیقی تصویر دکھائی جاتی ہے یعنی انہیں مستقبل میں پیش آنے والے واقعات سے آگاہ کیا جاتا ہے

خوابوں کے ذریعے ہمیں نہ صرف ماضی اور حال کے بہت سے لامعلوم واقعات کا علم ہو جاتا ہے بلکہ مستقبل میں رونما ہونے والی باتیں بھی ہم پر روشن ہوجاتی ہیں بشرطیکہ محبت تعبیر دینے کی صلاحیتوں کی صفات سے آراستہ پیراستہ ہوں

Khwabon ki Tabeer

بلاشک باز خواب جہوٹے بھی ہوتے ہیں لیکن یہ انہی لوگوں کو دکھائی دیتے ہیں جو ناپاکی کے عالم میں محو استراحت ہو اس کے برعکس جو لوگ پاکیزگی اور طہارت کے عالم میں خواب دیکھتے ہیں وہ حقیقت پر مبنی ہوتے ہیں

بہت سے خواب شیطان لعین کے القا سے ہوتے ہیں.چنانچہ اس قسم کے جملہ خواب مثلا یہ دیکھنا کہ سرکٹ گیا ہے یا کسی کو قتل کر دیا گیا ہے اسی فعل سے ہیں.
احتلام بھی شیطان لعین کا ہی اثر ہوتا ہے اور اس سے جنود ابلیس کی یہ غرض ہوتی ہے کہ مومن کو غسل طہارت کی زحمت میں ڈالیں یا حاجت غسل کے ذریعہ سے نماز فجر کے وقت پر پڑھنے میں خلل انداز ہو.

علماء نے لکھا ہے کہ اچھا خواب حضرت عہد جدید کی طرف سے بشارت ہوتی ہے تاکہ بندہ اپنے پروردگار کے ساتھ حسن ظن میں راسخ العتقاد ہو جائے اور یہ بشارت مزید شکر وامتنان کا باعث ہو جوتا اور مکروہ خواب شیطانی القا سے ہوتا ہے شیطان کی غرض مومن کو فون کرنا ہے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اچھا خواب اللہ کی طرف سے ہے اور برا خواب شیطان لعین کی جانب سے ہے پس جب کوئی شخص پسندیدہ خواب دیکھے تو اس کو صرف اس شخص سے بیان کریں جس سے محبت و اعتقاد ہے اور جب نکلو خواب دیکھے تو حق تعالیٰ سے اس خواب کے شر اور شیطان العین کے فتنہ سے پناہ مانگے اور یہ بھی مناسب ہے کہ اس دفعہ تین بار طلاق دے اور ایسا خواب کسی سے بیان نہ کرے اس حالت اتنے برے خواب کوئی زور نہ دے گا.

 

اگر خواب نماز کے بارے میں ہو تو نماز میں سفر کے متعلق ہو تو سفر میں نکاح کے متعلق ہو تو اپنے نکاح کے حالات میں اپنے دل  سے خواب کی تعبیر معلوم کرے کہ دل کے فیصلے کے مطابق اس کی تعبیر دے دے اگر خواب کی تعبیر بے حیائی ہو یا اور کوئ  بری بات تو اسے چھپائے اور اچھے الفاظ میں تعبیر دے دے اور خواب کی اصل تعبیر نہ بتائے.

تعبیر دینے والے کو اصل خواب میں اگر جنس قسم اور طبیعت معلوم ہو جائے تو اس کی تعبیر اسی پر محمول ہوگی اور اس تعبیر پر بھروسا کیا جائے گا جن کی مثال جیسے درخت درندے اور پرندے ان سب کی تعبیر مرد ہی اس کے بعد وہ قسم پر غور کرے اگر خواب درخت ہوں تو کون سا درخت اگر خواب میں درندے اور پرندے دیکھے تو کون سے پھر تعبیر بیان کردے.

اگر کھجور کا درخت ہوگا تو اس کی تعبیر عزت دار ہوگا کیونکہ کھجور کے درخت عرب کے شہروں میں اگتے ہیں اور اگر اخروٹ کا درخت ہوگا تو آج میں آدمی ہو گا کیونکہ اخروٹ عجم نے پیدا ہوتا ہے اسی طرح پرندہ ہے اگر غور ہوگا تو اس سے مراد عجم کا کوئی آدمی ہوگا تو اس کے بعد طبیعت پر غور کرے اگر کھجور کا درخت ہے تو تعبیر دے کہ وہ بہت بھلائی کرنے والا اور خاندانی شریف ہوگا اور اگر اخروٹ ہے تو فیصلہ کریں کہ وہ معاملے میں دھوکہ اور جھگڑا کرے گا کیونکہ جب تک اخروٹ کھڑکے توڑا نہیں جاتا اس کی گری نہیں ملتی اور اگر پرندہ ہے تو اڑتے رہنے کی وجہ سے اس کی تعبیر سیاح ہوگی.

اور اگر مور ہے تو تعبیر ہوگی عجم کا خوبصورت مالدار اور بہتر رائے رکھنے والا بادشاہ اگر خواب میں شاہین یا عقاب نظر آئے تو بھی یہی تعبیر ہوگی۔

اگر رکوع ہے تو تعبیر بے دین گنہگار آدمی ہے اسی طرح جو کہ بندہ ہے اس کو خواب میں ہے کہ کے تقاضے کے مطابق یا ذکر اللہ تعالی کی طرف سے تجھ کو رہنمائی ملے گی اور اللہ تعالی سے توفیق حاصل ہو۔

Khawab ki Tabeer

بہت سے خواب شیطان لعین کے القا سے ہوتے ہیں.چنانچہ اس قسم کے جملہ خواب مثلا یہ دیکھنا کہ سرکٹ گیا ہے یا کسی کو قتل کر دیا گیا ہے اسی فعل سے ہیں.
احتلام بھی شیطان لعین کا ہی اثر ہوتا ہے اور اس سے جنود ابلیس کی یہ غرض ہوتی ہے کہ مومن کو غسل طہارت کی زحمت میں ڈالیں یا حاجت غسل کے ذریعہ سے نماز فجر کے وقت پر پڑھنے میں خلل انداز ہو.

علماء نے لکھا ہے کہ اچھا خواب حضرت عہد جدید کی طرف سے بشارت ہوتی ہے تاکہ بندہ اپنے پروردگار کے ساتھ حسن ظن میں راسخ العتقاد ہو جائے اور یہ بشارت مزید شکر وامتنان کا باعث ہو جوتا اور مکروہ خواب شیطانی القا سے ہوتا ہے شیطان کی غرض مومن کو فون کرنا ہے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اچھا خواب اللہ کی طرف سے ہے اور برا خواب شیطان لعین کی جانب سے ہے پس جب کوئی شخص پسندیدہ خواب دیکھے تو اس کو صرف اس شخص سے بیان کریں جس سے محبت و اعتقاد ہے اور جب نکلو خواب دیکھے تو حق تعالیٰ سے اس خواب کے شر اور شیطان العین کے فتنہ سے پناہ مانگے اور یہ بھی مناسب ہے کہ اس دفعہ تین بار طلاق دے اور ایسا خواب کسی سے بیان نہ کرے اس حالت اتنے برے خواب کوئی زور نہ دے گا.

یہ بات ذہن نشین کرنی چاہیے کہ خواب کے لیے سچی تعبیر کے لحاظ سے رات کا آخری حصہ دوپہر کا تیل والا یا دن بہترین وقت ہوتا ہے اور پھلوں کے پکنے اور ان کے بیچنے کا زمانہ بھی سچی تعبیر کے لیے بہتر وقت ہے سب سے کمزور وہ خواب ہے جو سردی یا بارش آنے کے وقت نظر آئیں تو آپ کا مطلب بتانے والے کے لیے لازمی ہے کہ وہ خواب دیکھنے والے کی بات سمجھے اور تعبیر کی کسوٹی پر پرکھے بغیر ہر بات درست ہو اور جملوں میں ربط ہو اور اسے ٹھیک مطلب سمجھ میں آتا ہوں تو وہ درست خواب ہوگا اگر اس میں کئی معنوں کی گنجائش ہو تو وہ غور کرے کہ کون سے معنی الفاظ سے زیادہ قریب اور اصل سے زیادہ نزدیک ہیں تو وہی تعبیر دے دے اگر تمام خواب پوچھا ہوا ہو اس اصول کے لحاظ سے مربوط نہ ہو تو یہ پراگندہ خیالات ہیں اور اگر خواب میں مشکوک ہو تو اس کے بارے میں دل سے تعبیر دریافت کرے.

اگر خواب نماز کے بارے میں ہو تو نماز میں سفر کے متعلق ہو تو سفر میں نکاح کے متعلق ہو تو اپنے نکاح کے حالات میں اپنے دل سے خواب کی تعبیر معلوم کرے کہ دل کے فیصلے کے مطابق اس کی تعبیر دے دے اگر خواب کی تعبیر بے حیائی ہو یا اور کوئی بری بات تو اسے چھپائے اور اچھے الفاظ میں تعبیر دے دے اور خواب کی اصل تعبیر نہ بتائے

 

ضعیف العمری میں حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اولاد کے لئے اللہ تعالی سے دعا مانگی جنان چہ اللہ تعالی نے انہیں ایک بیٹا حضرت اسماعیل علیہ السلام عطا فرمایا جب حضرت اسماعیل علیہ السلام سیانے ہو گئے تو حضرت ابراہیم علیہ السلام نے مسلسل تین روز رات کو خواب میں دیکھا کہ اللہ تعالی انہیں حکم دیتا ہے کہ اپنے اکلوتے بیٹے کی قربانی کرو کیونکہ انبیاء علیہ السلام کے خواب سچے اور وحی الہی ہوتے ہیں اس لیے حضرت ابراہیم علیہ السلام منشائے الٰہی کے مطابق بیٹے کی قربانی کے بخشی تیار ہوگئے چنانچہ انہوں نے خواب بیٹے سے بیان کیا تو بیٹے نے خواب آور اثرات تسلیم خم کر دیا اور کہا اے میرے باپ آپ خدا کا حکم پورا کریں خدا نے چاہا تو آپ مجھے صابر پائیں گے۔

چنانچہ حضرت ابراہیم علیہ السلام حضرت اسماعیل علیہ السلام کو ساتھ لے کر جنگل کی طرف چل دیے عزیز کی اور بیٹے کو پیشانی کے بل لٹا کر ذبح کرنے لگے تو فورا خدا تعالی کی طرف سے حکم آیا کہ ابراہیم تو نے اپنا خواب سچا کر دکھایا اب لڑکے کو چھوڑ دے اور تمہارے پاس 2 مینٹ کھڑا ہے بیٹے کے بدلے اسے قربان کرتے آپ نے پیچھے مڑ کر دیکھا تو ایک گاڑی کے قریب مینڈھا کھڑا تھا حضرت ابراہیم علیہ السلام نے خدا کا شکر ادا کیا اور حکم خداوندی کے مطابق مینڈھے کو ذبح کر دیا۔

 

حضرت یوسف علیہ السلام چھوٹے سے ہی تھے کہ ایک دن خواب میں دیکھا کہ گیارہ ستارے اور چاند اور سورج انہیں سجدہ کر رہے ہیں بچپن کا یہ زمانہ اور یہ حیران کن خواب جب آنکھ کھلی تو آپ نے یہ خواب اپنے والد حضرت یعقوب علیہ السلام کو سنایا تو یہ خواب سن کر باپ نے بیٹے کو نصیحت کی کہ یہ خواب اپنے بھائیوں کو نہ سنانا مبادہ وہ تمہیں ذرا پہنچانے کے درپے ہو جائیں پھر ارشاد فرمایا کہ تمہارا خدا تمہیں منتخب کرے گا اور تمہیں المدخل کا بھی عطا فرمائے گا یعنی تمہیں خوابوں کی تعبیر کا علم دے گا چنانچہ جیسا کہ حضرت یعقوب علیہ السلام نے فرمایا تھا بعد میں ہو بہو سچ ثابت ہوا یعنی ناصر حضرت یوسف علیہ السلام کا اپنا خواب سچا نکلا بلکہ اللہ تعالی نے انہیں خوابوں کی تعبیر کا علم بھی دیہات چنانچہ حضرت یوسف علیہ السلام نے ایک موقع پر خدا تعالی کی عنایتوں کا شکر ادا کرتے ہوئے فرمایا اے پروردگار تو نے مجھے سلطنت کا بڑا حصہ لیا اور نیز مجھے خوابوں کی تعبیر بتانے کی تعلیم دی جو کہ علم عظیم ہے۔


حضرت یوسف علیہ السلام جب عزیز مصر کی حکم سے قید خانہ میں ڈال دیئے گئے تو اسی قید خانہ میں ان کے ساتھ دو اور نوجوان قیدی تھے ان میں سے ایک بادشاہ کا ساقی اور دوسرا شاہد اور سیکھانے کا دعویٰ تھا قرآن مجید اور رات دونوں میں اس کا ذکر موجود ہے اور حضرت یوسف علیہ السلام کو اپنے اپنے خواب سنائے اور حضرت یوسف علیہ السلام نے ان کے خوابوں کی تعبیر بتائیں وہ بالکل صحیح اور درست نکلی تو رات میں ان خوابوں کو پوری تفصیل کے ساتھ بیان کیا گیا ہے لہذا آپ کی آگاہی کے لیے تورات کا بیان ذیل میں درج کیا جاتا ہے۔

اور شاہ مصر کے ساتھی اور نان بائی نے جو جیل خانہ میں نظر بند تھے ایک ہی رات میں ایک خواب دیکھا جب یوسف علیہ السلام صبح کے وقت اندر داخل ہوا تو انہوں نے اس سے کہا کہ اس جگہ دو آدمی اور بھی ہیں اس نے شاہ کے ہاتھوں سے جو ان کے ساتھ ہی اس کے افتتاح کے گھر میں نظر بند کرنے سے دریافت کیا کہ آج تم کیوں اداس نظر آتے ہو انہوں نے اس سے کہا کہ ہم نے ایک خواب دیکھا ہے جس کی تعبیر بتانے والا کوئی نہیں یوسف علیہ السلام نے ان سے کہا کہ تعبیر کی قدرت خدا کو نہیں مجھے رے ساقی نے اپنا خواب یوسف علیہ السلام سے بیان کیا اس نے کہا میں نے خواب میں دیکھا ہے کہ انگور کی بیل میرے سامنے ہے اور اس دن میں تین شاخیں ہیں مدرسہ دکھائی دیا کہ اس میں کلیئر لگی پھول آئے اور سب کے سب کچھ آپ کے انگور لگے اور شاہ کا پہلا میرے ہاتھ میں ہے اور میں نے ان دونوں کو لے کر جا کے ٹیلے میں نچوڑا اور وہ پیالہ منیشا کے ہاتھ میں دے دیا۔

یوسف علیہ السلام نے اس سے کہا کہ اس کی تعبیر یہ ہے کہ وہ تین شاخیں تین دن ہیں سو آپ سے تین دن کے اندر چاہتے ہیں جبکہ تو اس کا ساتھی تھا یا شاہ کے ہاتھ میں دیا کرے گا لیکن جب خوشحال ہو جائے گا تو مجھے یاد کرنا اور ذرا مجھ سے مہربانی سے پیش آنا اور شاہ سے میرا ذکر کرنا اور مجھے اس گھر سے چھٹکارا دلانا کیونکہ مجھے چرا کر لے آئے ہیں اور یہ ابھی میں نے ایسا کوئی کام نہیں کیا جس کے سبب سے اہل خانہ میں ڈالا جاؤں۔

جب داروغ باورچی خانہ نے دیکھا کہ تعبیر اچھی نکلی تو یوسف علیہ السلام سے کہا کہ میں نے بھی ایک خواب دیکھا ہے کہ میرے سر پر سفید روٹیوں کی تین ٹوکریاں ہیں اور اوپر کی ٹوکری میں ہر قسم کا پکا ہوا کھانا کھا کے لئے ہے اور پرندے میرے سر پر ٹھوکریں کھا رہے ہیں۔

یوسف علیہ السلام نے اس سے کہا کہ اس کی تعبیر یہ ہے کہ وہ تین ٹوکریاں تین دن ہیں سو آپ سے تین دن کے اندر شاہ تیرا سر تن سے جدا کر دے گا اور تجھے ایک درخت پر تنوع دے گا اور پرندے کا گوشت نوچ نوچ کر کھائیں گے اور تیسرے دن جو شاہ کی سالگرہ کا دن تھا یوں ہوا کہ اس نے اپنے سب نو کی ضیافت کی اور اس نے سردار صابر سردار نبی کو اپنے نوکروں کے ساتھ یاد فرمایا اور اس نے سردار ایاز صادق کو پھر اپنی خدمات پر بحال کر لیا اور شاہ کے ہاتھوں میں پیالہ لگا مگر اس کو پھانسی دلوائی جیسا کے حضرت یوسف علیہ السلام نے تعبیر کر کے اسے بتایا تھا۔

 

Interpretation of Dreams

Although intellectuals in every part of the world and in every nation have scattered pearls of knowledge about dreams and their interpretation according to their intellect and wisdom, the scholars of Islamic rule have worked as hard, curiously and researched in this regard. He is your example. He has written many useful books on this subject. The Qur’an also mentions true dreams instead.


Dreams are also mentioned in the Qur’an and in other holy spiritual books. Some of these dreams have historical status and universal fame. Therefore, in order to understand the nature of these divine dreams and to know the interpretation of dreams, Hazrat The dreams of Abraham and Joseph are very important.

 

It should be borne in mind that in terms of true interpretation of dreams, the last part of the night is the best time for noon oil or day and the time of ripening and selling of fruits is also the best time for true interpretation. It is a dream that appears when it is cold or rainy, so it is imperative for the interpreter to understand what the dreamer is saying, and to test everything on the test of interpretation, and to have coherence in the sentences, and to interpret it correctly. I understand that it would be a true dream. If there is room for many meanings in it, then he should consider which meanings are closer to the words and closer to the original, then give the same interpretation if all the dreams are asked according to this principle. If it is not connected to, then these are scattered thoughts and if it is doubtful in the dream, then seek the interpretation of it from the heart.

 

If the dream is about prayers, if it is about travel in prayers, if it is about marriage during travel, then in the circumstances of his marriage, he should find out the interpretation of the dream from his heart, so that he can interpret it according to the decision of his heart. If there is any obscenity or any other bad thing, hide it and interpret it in good words and do not tell the real interpretation of the dream.

If the interpreter knows the sex, type and nature in the original dream, then the interpretation will be based on him and the interpretation will be relied upon, the example of which is like the tree, the beast and the bird. Consider if the dream is a tree, then which tree, if you see beasts and birds in a dream, then which one will interpret.

If there is a palm tree, then its interpretation will be honorable, because palm trees grow in the cities of Arabia, and if there is a walnut tree, then today I will be a man, because a walnut is born by a non-Arab, so is a bird. If there is a man from Ajam, then he should consider nature. If there is a palm tree, then explain that he is a very kind and noble family man, and if there is a walnut, then decide that he will cheat and quarrel in the matter because As long as the walnut window is not broken, it will not be found, and if it is a bird, it will be interpreted as a tourist because it keeps flying.

And if there is a peacock, then it will be the interpretation of the beautiful, wealthy and well-meaning king of Ajam.